138

بھارتی تسلط کے 70 سال مکمل؛ کشمیریوں کا یوم سیاہ

سری نگر:مقبوضہ کشمیر میں بھارتی غاصبانہ قبضے کے ستر برس مکمل ہونے پر آج کشمیری دنیا بھر میں یوم سیاہ منا رہے ہیں ۔

دنیا کی سب سے بڑی نام نہاد جمہوریت کے دعویدار بھارت کی وعدہ شکنی اور انسانیت سوز مظالم ہر گزرتے دن کے ساتھ کمشیریوں کا عزم و حوصلہ بلند تر کیے جا رہے ہیں ۔ دنیا بھر میں کشمیری عوام آج بھارت کے غاصبانہ قبضے کیخلاف یوم سیاہ منا رہے ہیں ۔

ستائیس اکتوبر 1947کو جب وادی جموں وکشمیر پر بھارتی فوج کے غیرقانونی تسلط اور وحشیانہ درندگی کے خلاف ہر سال دنیا بھر میں کشمیری یوم سیاہ مناتے ہیں۔ حریت قیادت کی جانب سے ہڑتال کی کال پرتجارتی اور تعلیمی سرگرمیاں معطل ہیں۔ بھارتی تسلط کے خلاف احتجاجی ریلیاں اور مظاہرے بھی کیے جائیں گے جبکہ مظفرآباد میں ڈسٹرکٹ کمپلیکس کے مقام پر مرکزی احتجاجی مظاہرہ کیا جائے گا اور ریلی نکالی جائے گی۔

بھارتی قبضے کے ساتھ ہی چھڑنے والی پہلی پاک بھارت جنگ میں فوج کو منہ کی کھاتا دیکھ کر جواہر لال نہرو نے کشمیریوں کو حق خود ارادیت دینے کا وعدہ کیا تھا، بات اقوام متحدہ کی قرار دادوں تک بھی پہنچی لیکن آج تک بھارت کا غاصبانہ تسلط قائم ہے۔

کشمیری چار دہائیوں تک پر امن جدو جہد کے ذریعے اپنا حق مانگتے رہے ۔لیکن بھارت نے جب کوئی راستہ نہ چھوڑا تو 1988میں حق چھین کر لینے کا فیصلہ کرلیا گیا ۔ حریت رہنما یاسین ملک کی اہلیہ مشال ملک کا کہنا ہے کہ اشفاق مجید وانی سے برہان وانی تک قربانیوں کا سفر جاری ہے ۔ کشمیری اپنے خون سے اپنی تقدیر میں آزادی لکھ رہے ہیں اور بزدل بھارت خود بھی خوفزدہ ہے کہ کشمیری اپنی منزل سے اب زیادہ دور نہیں ہیں ۔ غاصبانہ تسلط کے 70 سال مکمل ہونے پر یوم سیاہ منا رہے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں