28

شریف خاندان سے تحقیقات کے لیے سوالنامہ تیار

قومی احتساب بیورو (نیب) نے پاناما پیپرز کیس پر سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد سبکدوش ہونے والے سابق وزیراعظم نواز شریف اور ان کے بچوں سے تفتیش کے لیے سوالنامہ تیار کرکے اسے چئیرمین نیب، ڈپٹی چئرمین نیب اور پراسیکیوٹر جنرل نیب کو بھجوادیا۔

قومی احتساب بیورو (نیب) نے پاناما پیپرز کیس پر سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد سبکدوش ہونے والے سابق وزیراعظم نواز شریف اور ان کے بچوں سے تفتیش کے لیے سوالنامہ تیار کرکے اسے چئیرمین نیب، ڈپٹی چئرمین نیب اور پراسیکیوٹر جنرل نیب کو بھجوادیا۔

نیب کے اعلی افسران نے مشترکہ ٹیم کا تیار کردہ سوالنامہ معمولی ترمیم کے بعد منظور کرلیا جس کے بعد نیب لاہور ڈویژن اور نیب راولپنڈی ڈویژن کی مشترکہ ٹیم نے تحقیقات کا آغاز کر دیا۔ نیب کے سوالنامے کے اہم نکات کے مطابق اس میں زیادہ تر شریف خاندان کے مالی معاملات کے بارے میں پوچھا جائے گا۔

نیب نواز شریف اور ان کے صاحبزادوں سے ہل میٹل کمپنی اور العزیزیہ اسٹیل ملز لمیٹڈ کے بارے میں سوالات کرے گی جبکہ نیب العزیزیہ اسٹیل ملز کی اراضی، مشینری کی خریداری اور انفرا اسٹرکچر کی تشکیل کے حوالے سے بھی سوال کرے گی۔

اس کے علاوہ العزیزیہ اسٹیلز مل کے لیے مشینری دبئی سے منگوانے کے ثبوتوں کے حوالے سے بھی سوال کئے جائیں گے جبکہ اس سوالنامے میں ہل میٹل اسٹیبلیشمنٹ کمپنی سے متعلق بھی سوال شامل ہوں گے۔

جیسا کہ ہل میٹل کمپنی کیسے بنی اور اس کو بنانے کے لیے پیسے کہاں سے آئے؟ ہل میٹل کمپنی کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں کون کون شامل ہے؟ ہل میٹل کمپنی کے شئیر ہولڈرز کی تفصیلات کہاں ہے؟

خیال رہے کہ ہل میٹل کمپنی کی تفتیش کے دوران نواز شریف، حسن نواز، حسین نواز، رحمان ملک اور میاں شہباز شریف کے بیانات ریکارڈ کیے گئے تھے۔اس کے ساتھ ہی نیب حسین نواز کی جانب سے نواز شریف کو تحفے میں دیے گی 84 کروڑ کی رقم کے بارے میں بھی تفتیش کرے گی۔

یاد رہے کہ اس سے قبل نیب ذرائع کے حوالے سے یہ رپورٹس سامنے آئی تھیں کہ نیب کے لاہور ڈیژن نے دو کیسز پر تحقیقات کا آغاز کردیا ہے، ان کیسز میں ایون فیلڈ فلیٹس اور اسحاق ڈار کے خلاف تحقیقات شامل تھیں۔

نیب ذرائع کے مطابق ایون فیلڈ فلیٹس انکوائری میں نواز شریف، مریم صفدر، حسن نواز اور حسین نواز ملوث ہیں، ذرائع کا مزید کہنا تھا کہ ایون فیلڈ فلیٹس انکوائری میں نواز شریف سمیت تمام فریقین کو اگست میں ہی طلب کیے جانے کا امکان ہے۔

ادھر اسحاق ڈار کے خلاف فلیگ شپ انویسٹ منٹ، ہارٹ سٹون پراپرٹیز، کیو ہولڈنگز، کیونٹ ایٹن پلیس، کیونٹ سولین لمیٹڈ، کیونٹ لمیٹڈ، فلیگ شپ سکیورٹیز لمیٹڈ، کومبر انکارپوریشن اور کیپیٹل ایف زید ای سمیت 16 اثاثہ جات کی تفتیش کی جائے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں