45

سپریم کورٹ: ای کورٹ سسٹم رکھنے والی دنیا کی پہلی عدالت بن گئی

ملک میں فوری اور سستے انصاف کی فراہمی کے سفرمیں اہم سنگ میل عبورکرلیا گیا۔ سپریم کورٹ میں ای کورٹ سسٹم کے ذریعے مقدمات کی سماعت کا باقاعدہ آغاز ہوگیا۔

عدالتی نظام جدید بنانے میں پاکستان کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ سپریم کورٹ آف پاکستان ، ای کورٹ سسٹم رکھنے والی دنیا کی پہلی سپریم کورٹ ہے۔

ای کورٹ سسٹم کے آغاز پر ویڈٰیو لنک کے ذریعے اسلام آباد سے کراچی رجسٹری میں کیس کی سماعت کی گئی،اس موقع پر چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ دنیا میں کہیں بھی ای کورٹ کا نظام نہیں، ہم آج عدالتی تاریخ میں نئے باب کا آغاز کر رہے ہیں۔ ای کورٹ سے سائلین پر مالی بوجھ بھی نہیں پڑے گا۔

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے عدالتی آئی ٹی کمیٹی کے انچارج جسٹس مشیر عالم اور جسٹس منصور علی شاہ کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ چیئرمین اور ڈی جی نادرا بھی مبارکباد کے مستحق ہیں جنہوں نے دن رات محنت کرکے ای کورٹ سسٹم کو ممکن بنایا۔

ای کورٹ سسٹم کے تحت ویڈیو لنک کے ذریعے سپریم کورٹ کے 3 رکنی بنچ نے ویڈیو لنک کے ذریعے اسلام آباد سے کراچی رجسٹری میں کیس کی سماعت کرتے ہوئے قتل کے ملزم نور محمد کی ضمانت ازقبل گرفتاری کی درخواست منظورکرلی۔

عداالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ تین سال تک درخواست پر فیصلہ کیوں نہیں ہوا؟ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ماڈل کورٹس 3 دن میں فوجداری مقدمات کا فیصلہ کر رہی ہیں، یہاں اتنی تاخیر کیوں ہوئی؟۔

ایڈیشنل پراسیکیوٹر جنرل سندھ کا کہنا تھا کہ سندھ ہائی کورٹ میں زیرالتواء مقدمات کا بوجھ ذیادہ ہے۔

عدالت نے فیصلے میں تاخیر پرسندھ ہائیکورٹ حیدرآباد رجسٹری کے متعلقہ جج کیخلاف کارروائی کا عندیہ دیتے ہوئے سیکرٹری سپریم جوڈیشل کونسل کو ہائیکورٹ کے حکم کی کاپی اور متعلقہ جج کا مؤقف لےکر رپورٹ کونسل میں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں