91

“مرد کو عورت کہنے سے مرد کو کچھ نہیں ہوگا،” بلاول بھٹو زرداری

پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ مرد کو عورت کہنے سے مرد کو کچھ نہیں ہوگا ،وزیراعظم اپنے عہدے کا احترام کریں زبان کا خیال کریں ،اس طرح کسی کی توہین نہیں خود اپنی توہین کررہے ہیں ،انہوں نے کہا کہ فاطمہ جناح نہ ہوتیں تو ایوب کےسامنے کون دیوار کی طرح کھڑا ہوتا ،کیا وزیراعظم عورت کو گالی دے رہے ہیں ۔

پارلیمنٹ ہاﺅس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے عمران خان پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم کہتے ہیں ایران پر پاکستان سے حملے ہو رہے ہیں ،ہمارے وزیراعظم نے ہمسایہ ملک میں جرمنی اور جاپان کو پڑوسی کہہ دیا،یہ اسی طرح ہوتاہے جب سلیکٹڈ اور نالائق بندہ ملک پر رکھواتے ہیں ،انہوں نے کہا کہ شاہ محمود اپنے وزیراعظم کو اس طرح کسی ملک میں اکیلا نہ چھوڑیں،وزیراعظم کی زبان لائٹ کی سپیڈ سے زیادہ سلپ آف ٹنگ ہوتی ہے ۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ کیسی حکومت ہے جو کہتی ہے مہنگائی ایشو نہیں، عوام مہنگائی کے سونامی میں ڈوب رہے ہیں ،مہنگائی کی وجہ سے پاکستانیوں کی زندگی تنگ ہوتی جا رہی ہے ،انہوں نے کہا کہ ایمنسٹی اور ریلیف امیر ترین لوگوں کیلئے ہے ،کیا غریب عوام کو ریلیف مل سکتا ہے ؟بلاول بھٹوزرداری کا کہناتھا کہ اگر آپ بیمار ہیں توصحت کاانصاف یہ کہتا ہے کہ آپ مر جائیں،کس قسم کا نظام ہے،کس قسم کی حکومت ہے۔

انہوں نے کہاکہ ایمنسٹی توبڑے بڑے لوگوں کیلئے ہے،کیاغریب عوام کوایمنسٹی مل رہی ہے،مزدورکوبیروزگار کرکے قرض واپس دیاجارہاہے،یہ کیسی حکومت ہے جس کا وزیرخزانہ کہتاہے ہماری پالیسیوں سے عوام کی چیخیں نکلیں گی،ان کی یہ سوچ ہے کہ امیرکومزید امیربنادیں،یہ ظالم حکمران ہیں ان کے دل میں غریب کیلئے کوئی درد نہیں ،انہوں نے کہا کہ ن لیگ نے پانچ برسوں میں 2اعشاریہ 8 ملین نوکریاں دیں جبکہ پیپلز پارٹی نے 5برسوں میں6اعشاریہ 8ملین نوکریاں دیں۔

انہوں نے کہا کہ اب یہ لوگ کٹوتی پر سوچ رہے ہیں ،سبسڈیز ختم کریں گے تاکہ امیروں کو ریلیف پہنچادیں ، حکمران عوام کا خیال رکھیں ورنہ ری ایکشن آئے گا ،انہوں نے کہا کہ خان صاحب انصاف کی بات کرتے ہیں اور حکومت ظلم کرتی ہے ،ن لیگ کی حکومت ہو یا پی ٹی آئی کی ،امیروں کے ریلیف کیلئے کام کرتے ہیں ،عوام ایک حد تک برداشت کر سکتے ہیں،اس بجٹ میں ریلیف نہ ہواتو عوام خود نکلے گے ،انہوںنے کہا کہ ون یونٹ یا صدارتی نظام نافذ کریں گے تو خبردار کرتاہوں ملک کیلئے خطرناک ہوگا،انہوں نے کہا کہ آپ کہتے تھے آئی ایم ایف سے ڈیل لینے سے پہلے خود کشی کرلوں گا،آپ نے قومی اسمبلی اور سینیٹ کو اعتماد میں نہیں لیا،آپ عوام پر جو بوجھ ڈالنے والے ہیں ہم اسے برداشت نہیں کریں گے ،بلاول بھٹوزرداری نے کہا کہ یہ کیسی حکومت ہے جو کہتی ہے مہنگائی کوئی ایشو نہیں ،سبسڈیزختم کرکے امیروں کوریلیف پہنچارہے ہیں،خان صاحب غریب اورانصاف کی بات کرتے ہیں اورحکومت ظلم کررہی ہے،اس قسم کے دو پاکستان نہیں چل سکتے،انہوں نے کہا کہ یہاں عجیب نظام ہے،ن لیگ کی حکومت ہویاپی ٹی آئی کی، امیروں کوریلیف دیتے ہیں۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ پیپلزپارٹی نے ہمیشہ غریب عوام کیلئے کام کیا ہے،ہم نے سب سے زیادہ نوکریاں دیں، ہمارے دور میں کم گروتھ کے باوجودسب سے زیادہ نوکریاں دیں،ہم نے تنخواہ بڑھائی، ہم نے پنشن بڑھائی،آپ ساری سیاسی قیادت کوجیل میں ڈالیں، عوام خودنکلیں گے،امیروں کیلئے ایمنسٹی ہے،یہ نظام نہیں چل سکتا،بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جلسہ جلوس اور کنٹینر کی سیاست بند کریں ، نئے اسلام آباد ایئرپورٹ کا نام بے نظیر کے نام پر رکھاجانا تھا،یہ بی آئی ایس پی پروگرام کو لپیٹنا چاہتے ہیں ،یہ نہ صرف نام بدلنا چاہتے ہیں پروگرام کو لپیٹنا چاہتے ہیں ،میں ٹرین سے گھر جا رہاتھا تو وزیراعظم کی چیخیں نکل رہی تھیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں