112

جیل میں بیٹھے خواجہ سعد رفیق بھی میدان میں آگئے

وفاقی وزیرخزانہ اسدعمر کابینہ سے الگ ہوگئے اور اس فیصلے پر جوڈیشل ریمانڈپر موجود لیگی رہنماخواجہ سعد رفیق بھی میدان میں آگئے اور ان کی ٹیم کی طرف سے سوشل میڈیا پر بتایاگیاکہ خواجہ سعد رفیق کاکہناہے کہ حکومت سے باہر بیٹھ کر باتیں کرنا آسان ہوتی ہیں، اب ذمہ داری آئی تو بھاگ کھڑے ہوئے اور ایک لیگی اکاﺅنٹ سے ٹوئیٹ کو ری ٹوئیٹ کردیا جس کے مطابق

”اسد عمر کا استعفی کافی نہیں۔۔۔ایک نااہل بندے کو وزارت خزانہ جیسا قلمدان دینے پر عمران خان قوم سے معافی مانگیں گے یا اپنی اس غلطی پر استعفی دیں گے؟“۔

ایک اور ٹوئیٹ میں ان کاکہناتھاکہ ’’حکمران نظام عدل، احتساب اور ابلاغ پر کنٹرول کرکے مخالفانہ آوازیں کچلنا چاہتے ہیں، انتقام آمیز احتساب معیشت اور جمہوریت کو لے ڈوبے گا، سیاسی اور معاشی مسائل کے حل کےلیے نفرت اور دشمنی کو بالائے طاق رکھنا ہوگا‘‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ ’’ قومی معیشت نفرت اور انتقام کی چتا میں جلائی جارہی ہے، اپوزیشن کا سر قلم کرنے کے چکر میں معیشت کا بھٹہ بٹھا دیا گیا، تحریک انصاف کی سونامی ترقی کے لیے تباہ کن ثابت ہوئی ہے‘‘۔

ان کاکہناتھاکہ ’’ عمران خان اور ان کی حکومت آگ سے کھیل رہے ہیں یہ انتقام آمیز احتساب معیشت اور جمہوریت کو لے ڈوبے گا‘‘۔

اپنا تبصرہ بھیجیں