53

ورلڈکپ سے پہلے پی سی بی میں بغاوت نے سر اٹھا لیا

آئی سی سی ورلڈکپ 2019ءسے پہلے پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) میں بغاوت نے سر اٹھا لیا ہے اور گورننگ باڈی کے اکثریتی اراکین نے کوئٹہ اجلاس کا ایجنڈا مسترد کرتے ہوئے نئے منیجنگ ڈائریکٹر (ایم ڈی) وسیم خان کی تقرری کو کالعدم قرار دیدیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق گورننگ باڈی کے اکثریتی اراکین نے اجلاس کا ایجنڈا مسترد کرتے ہوئے ایک قرارداد پیش کی جس پر پانچ اراکین کے دستخط ہیں۔ نجی ٹی وی جیو نیوز کے مطابق فاٹا کے کبیر خان، سیالکوٹ کے نعمان بٹ، لاہور کے شاہ ریزرو کڑی، کوئٹہ کے شاہ دوست اور خان ریسرچ لیبارٹریز کے ایاز خان قرارداد پیش کرنے والوں میں شامل ہیں۔

ذرائع کے مطابق پی سی بی گورننگ بورڈ اجلاس میں اکثریتی اراکین نے منیجنگ ڈائریکٹر وسیم خان کی تقرری تسلیم کرنے سے انکار کر دیا جبکہ قرارداد کے مطابق ممبران پی سی بی نے نیا مجوزہ ڈومیسٹک کرکٹ سٹرکچر بھی مسترد کر دیا ہے اور ڈومیسٹک کرکٹ سٹرکچر کیلئے نئی کمیٹی بنانے کی تجویز بھی دیتے ہوئے مطالبات ماننے تک گورننگ بورڈ کے اجلاس کا بائیکاٹ کرنے کا اعلان بھی کیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اجلاس میں گورننگ بورڈ کے پانچ اراکین کے احتجاج کرنے پر تلخی بھی ہوئی جبکہ پی سی بی کے آئین کے مطابق اکثریتی اراکین کے فیصلے کو تسلیم کیا جاتا ہے جس کے باعث نئے چیئرمین پی سی بی احسان مانی اور منیجنگ ڈائریکٹر وسیم خان کیلئے کافی مشکلات کھڑی ہو گئی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں