79

وزیراعظم کے بیان کے بعد وزیراطلاعات فواد چوہدری نے بھی بیان دے دیا

پنجاب اسمبلی کے اراکین، سابق اور موجودہ وزیراعلیٰ کی تنخواہوں اور مراعات میں اضافے کا بل گزشتہ روز منظور ہوا جس پر آج وزیراعظم عمران خان نے شدید مایوسی کا اظہار کر دیا ہے اور اب فواد چوہدری نے ایسی بات کہہ دی ہے کہ اراکین پنجاب اسمبلی بھی پریشان ہو جائیں۔

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری اپنے پیغام میں اس اقدام کو وزیراعظم اور وفاقی حکومت کی پالیسیوں سے متصادم قرار دیتے ہوئے امید ظاہر کی کہ اس پالیسی پر فوری نظرثانی کی جانی چاہئے۔

فواد چوہدری نے اپنے پیغام میں لکھا ”وزیر اعلیٰ اور پنجاب اسمبلی کے خود کو نوازنے کے اقدامات وزیر اعظم اور وفاقی حکومت کی پالیسیز سے متصادم ہیں ، تحریک انصاف کی پالیسی کا صریحاً مذاق اڑایا گیا ہے۔ امید ہے اس پالیسی پر فوری نظرثانی کی جانی چاہئے۔“

ایک اور ٹویٹ میں فواد چوہدری نے کہا کہ ”لگتا ہے پنجاب حکومت اور وزیراعلیٰ ہاﺅس وزیراعظم اور وفاقی حکومت کی سادگی پالیسی سے بے خبر ہیں ورنہ خود کو نوازنے اور فوائد دینے کا شرمناک کام نہ کیا جاتا۔“

اس سے کچھ دیر قبل وزیراعظم عمران خان نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری اپنے پیغام میں کہا تھا کہ ارکان پنجاب اسمبلی کی تنخواہوں اور مراعات میں اضافے پر شدید مایوسی ہوئی ہے ، پاکستان میں خوشحالی واپس آئے تو ایسے اقدام کا جواز بنتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسے وقت میں جب ہمارے پاس عوام کو بنیادی سہولتیں فراہم کرنے کے وسائل نہیں ہیں ، یہ اقدام اٹھانا ناقابل دفاع ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ اراکین پنجاب اسمبلی کی تنخواہوں میں اضافے کا بل منظور کیا گیا جس کے بعد اراکین اسمبلی کی تنخواہ اور مراعات 83 ہزار سے بڑھ کر 2 لاکھ روپے ہو گئی ہے۔ بل کے مطابق بنیادی تنخواہ 18 ہزار سے بڑھا کر 80 ہزار روپے کر دی گئی ہے جبکہ ڈیلی الاﺅ نس ایک ہزار سے چار ہزار روپے، ہاﺅس رینٹ 29 ہزار سے بڑھا کر 50 ہزار روپے ہو اور یوٹیلیٹی الاﺅنس 6 ہزار روپے سے بڑھا کر 20 ہزار روپے کر دیا گیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں