114

اسلام آباد میں دھرنے کے شرکا اور پولیس میں تصادم

مذہبی جماعت کے دھرنے کے دوران شرکا اور پولیس میں تصادم ہوا جس کے نتیجے میں ایس ایچ او سمیت تین پولیس اہلکار زخمی ہوگئے۔

مذہبی تنظیم تحریک لبیک یا رسول اللہ کے لگ بھگ 2,000 کارکنوں کی جانب سے اسلام آباد جانے والی بڑی شاہراہ کی ناکہ بندی آج چھٹے روز بھی جاری رہی جس کے باعث وفاقی دارالحکومت بڑی حد تک محصور ہو کر رہ گیا ہے۔پولیس اور شرکا کے درمیان تصادم ہوا جس میں ایس ایچ او آئی نائن سمیت دو پولیس اہلکار زخمی ہوگئے ہیں۔ آئی جی اسلام آباد پولیس کا کہنا ہے کہ دھرنے کے شرکا جان بوجھ کر محاذ آرائی کا ماحول پیدا کررہے ہیں اور چاہتے ہیں کہ پولیس کے ساتھ تصادم ہو۔

اسلام آباد میں موجود یہ مظاہرین ڈنڈوں سے مسلح ہیں اور مظاہرے کے مقام کی جانب بڑھنے والے ہر شخص کی تلاشی لیتے ہیں۔ وہ کسی بھی گاڑی کو گزرنے کی اجازت نہیں دیتے اور اگر کوئی گاڑی اس جانب آتی ہے تو اس پر پتھرا ئوشروع کر دیتے ہیں۔

دھرنے میں شریک مظاہرین کا کہنا ہے کہ اگر پولیس ہمارے خلاف آپریشن کرے گی تو ہم بھی اپنا دفاع کریں گے۔ مظاہرے میں شریک قائدین نے شرکا کو مزاحمت کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اپنے دفاع میں پولیس کے خلاف کارروائی کی جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں