107

میئراسلام آباد اور بلدیاتی نمائندوں کے درمیان اختلافات

اسلام آباد(17 اکتوبر 2017 )میٹروپولیٹن کارپوریشن کے 16 ویں اجلاس کے دوران (ن) لیگی منتخب بلدیاتی نمائندوں کے میئراسلام آباد جبکہ وزیر مملکت کیڈ اور(ن)لیگی اعلی قیادت کے درمیان اختلافات کھل کرسامنے آگئے،اجلاس میں اپوزیشن کے ساتھ ساتھ (ن)لیگی چیئر مین بھی وزیر کیڈ اور میئر اسلام آباد پر کھل کر برسے ، سی ڈی اے کی جانب سے بجلی اورگیس کے نئے میٹروں پر عائد کی گئی پابندی پرحکومتی جماعت مسلم لیگ (ن)اوراپوزیشن جماعت پی ٹی آئی کے ارکین کی میئر اسلام آباد و قائم مقام چیئر مین اورچیف میٹروآفیسر اسد محمود کیانی پر بھی کڑی تنقید،ارکین نے کہا کہ اگر عدالتی احکامات پرغیر قانونی تعمیرات کوروکنے کیلئے سی ڈی اے نے یہ پابندی لگائی ہے تو پھر ایوان کو بتایا جائے کہ وزیر مملکت برائے کیڈ کس قانون کے تحت نئی نئی ہاؤسنگ سوسائٹیوں ،کھمبوں ،بجلی اورگیس کے میٹروں کا افتتا ح کررہے ہیں؟

تفصیلات کے مطابق میٹروپولیٹن کارپویشن (ایم سی آئی )کا 16 واں اجلاس پاک چائنہ فرینڈ شپ سنٹر میں منعقد ہوا جس کی صدارت میئر اسلام آباد وقائم مقام چیئرمین سی ڈی اے شیخ انصرعزیز نے کی۔

اجلا س کے آغاز پر ہی چیف میٹروآفیسر اسدکیانی نے ایوان کو وفاقی دارالحکومت کے پانچوں زونز کی تفصیلات سے آگاہ کیا جس میں شااللہ دتہ کو زون 3 میں ظاہرکیاگیا ،جس پر (ن)لیگی ڈپٹی میئر ذیشان علی نقوی سینخ پا ہوگئے اورمیئر اسلام آباد اورچیف میٹروآفیسر کو کھری کھری سنا دیں اورکہا کہ آپ ثابت کریں کہ شاہ اللہ دتہ زون ون میں نہیں بلکہ زون تھری میں ہے۔

ایوان کے دیگر اراکین نے بھی شہر کے مختلف زونز میں سی ڈی اے کی جانب سے کی جانے والی ترامیم اورازخود تبدیلیوں پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جہاں پر کسی بڑی ہاؤسنگ سکیمز کے مالکان کو ”نوازنا”ہوتا ہے سی ڈی اے فوری طور پر زون تبدیل کردیتا ہے،یہ قانون ہمیں نہ پڑھائیں۔ (ن)لیگی چیئر مین راجہ زاہد نے کہا کہ چھ ماہ سے ہم میٹروں پر بحث کررہے ہیں مزید چھ ماہ بھی ہم بحث ہی کرتے رہیں گے اورکوئی حل نہیں نکلے گا میئر صاحب اس قوم پر مہربانی کریں،میاں نواز شریف اگر آپ کو سرگودھا سے یہاں لاکر آْ پ کے من پسند دوسیٹیں میئرشپ اورچیئر مینی آپ کو دے سکتے ہیں تو کیا آپ کے مانگنے کیلئے شہر کیلئے کچھ نہیں دے سکتے؟حقیقت تو یہ ہے کہ آپ نے صرف اپنے لئے مانگا عوام کیلئے آپ نے آج تک کچھ بھی نہیں مانگا،اب میٹرو ں کے معاملہ پر کمیٹی بنائی جائے جو ایک ہفتہ میں اپنی تجاویز دیں۔اس وقت سی ڈی اے میں میٹرو ں کیلئے این او سی کے نام پر کرپشن کا بازار گرم ہوگیا ہے 5 ہزار میں لگنے والے میٹر کا ریٹ اب25 ہزارروپے ہو چکا ہے. (ن)لیگی چیئر مین اظہر نیچیف میٹروآفیسر سے مخاطب ہوکرکہا کہ کیانی صاحب اگر سی ڈی اے اے کو رشوت دے کر ہی میٹر لینا ہے تو پھر آپ برائے مہربانی اس رشوت کا ”ریٹ ”مقرر کردیں ، انہوں نے ایوان کو آگا ہ کیا کہ ذیلی زون بی ون کے گرین بیلٹس پر تعمیرات جاری ہیں خود سی ڈی اے ان کے ساتھ کھڑا ہے۔

میئر اسلام آباد وقائم مقام چیئرمین سی ڈی اے شیخ انصرعزیزنے ایوان کو آگاہ کیا کہ اگر ماضی میں غیر قانونی تعمیرات کو نہیں روکا گیا تو کیا اسی بات کو جواز بنا کر ہم بھی آنکھیں بند کرلیں ،ہم ان تعمیرات کو مسمار نہیں کررہے بلکہ انہیں ریگولائزکرنا چاہتے ہیں، ہمیں مسئلہ کا حل نکالنا ہے بلا جوازتنقید نہ کی جائے،عدالتی احکامات کے بعد سی ڈی اے نے کسی کوبھی این اوسی جاری نہیں کیا،ہم نے اس مقصد کے لئے بی سی ایس ٹو بنا دی ہے آپ اپنے نقشے ان کے پاس لے کر جائیں وہ فوری طور پر منظوری کرکے آپ کو این او سی جاری کردیں گے اس میں مسئلے والی کوئی بات نہیں ہے ،مگر ایسا نہیں کہ اب غیر قانونی تعمیرات کو چلنے دیاجائے،میئر نے کہا کہ ماضی میں غفلت کے باعث ای الیون میں دس دس منزلہ عمارات بن گئیں اگر آگ لگ جائے یا کوئی ناگہانہ آفت آجائے تو ہم ریسکیوکرنے کیلئے ان دن فٹ کی گلیوں میں گاڑیاں کہاں سے لے کرجائیں گے ،بعد میں تو سارا ملبہ سی ڈی اے اور ایم س آئی پر آنا ہے،میئر نے کہا کہ میٹروں کے معاملہ پر ایک کمیٹی بنائی جائے جو ایک ہفتہ میں اپنی سفارشات اورتجاویرپیش کریں۔

میئر اسلام آباد نے پراپرٹی ٹیکس ،پانی کے چارجز سمیت دیگرکے چارجز میں اضافے پر غور کرنے کیلئے بھی کمیٹی کی تشکیل کی تجویز دے دی،اجلاس میں راجہ زاہد نے اسلام آباد کے شہریوں کے لئے سرکاری نوکریوں میں کوٹہ مختص کرنے کی قرارداد بھی پیش کی گئی جسے فوری طور پر منظور کرلیاگیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں